چلو اُس پار چلتے ہیں


( وطن ِ پاک کے دِگر گُوں حالات ِ پیش آمدہ کے تناظُر میں )

چلو اُس پار چلتے ہیں

جہاں سب ایک دُوجے سے محبّت کرنے والے ہوں
جہاں فَتووں کی دُکّانوں پَہ تالے ہوں
جہاں مُلّائِیّت کا اُور جہالت اُور کسی بھی خوف و دہشت کا
نہ قبضہ ہو
جہاں پر حُکم رانوں ‘ نِیم مُلّاؤں ‘ وڈیروں اُور سیاست باز اہل ِ شر
کوئ بھی نہ ڈیرا ہو
جہاں پر مسجدوں میں ‘ مدرسوں میں ‘ خانقاہوں
اَور چوراہوں میں کوئ بَم نہ پَھٹتا ہو
جہاں حق بات کرنے پر کسی بھی اہل ِ حق کا سَر نہ کٹتا ہو
جہاں مُردوں کی لاشوں کی نہ یُوں تضحِیک ہوتی ہو
جہاں حَسّاس دِل اِنسان کی دُنیا نہ یُوں تاریک ہوتی ہو
جہاں پر پُھول سے معصُوم سب بَچّوں کے ہاتھوں میں قلم ہوں
اُور کتابیں ہوں
جہاں پر کوئ ماں ننگے سَر اَپنی جھولی پھیلائے
نہ یُوں رستے پَہ بیٹھی ہو
جہاں پر کوئ بیٹی بھی فقَط دو وقت کے کھانے کی خاطِر
یُوں سَر ِ بازار کوٹھے پر نہ بِکتی ہو
جہاں پر دو محبّت کرنے والے اہل ِ دِل کی راہ میں
رَسم و قیُود ِ جاہِلانہ کی یہ دیواریں نہ اُٹھتی ہوں
جہاں اَمن و اماں کی اِن سلیٹی فاختاؤں پر
کمانیں اَور بندُوقیں نہ چلتی ہوں
جہاں پر عدل اور اِنصاف ہی کا بول بالا ہو
جہاں پر دانِش و حِکمت کا اُور بَس عِلم و فن کا دَور دَورہ ہو
جہاں پر اہل ِ عِلم و فن کی سب تعظیم کرتے ہوں
جہاں پر محترم ہَستی کی سب تکریم کرتے ہوں
جہاں ہَر فَرد کے لب پر مُحبّت کا ترانہ ہو
جہاں پر زندگی کا ایک رَقص ِ والہانہ ہو

سو ‘ اپنے آپ سے آگے نِکلتے ہیں
چلو آؤ کِہ ہم اُس پار چلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرویز ساحِر
( ایبٹ آباد ‘ پاک ستان )

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s