کہُوں کِس سے۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ؟


( وطن ِ پاک میں رُو پذیر ہونے والے کَھٹناور سانحات ‘ خُونِیں واقعات اور
دِگر گُوں حالات کے تناظُر میں کہی گئ طبع زاد نظم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پرویز ساحِر)۔۔

کہُوں کِس سے۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ؟

مِرا ہر شہر کوئ قتل گاہِ دہر بنتا جا رہا ہے۔۔۔۔!
جہاں پر آئے دِن مذہَب ‘ سیاست اُور لسانی تفرقوں کے نام پر
معصُوم اِنسانوں کا قتل ِ عام ہوتا آ رہا ہے۔۔۔۔۔!
کہِیں پر بَم دَھماکوں ‘ گولیوں سے زخم خُوردہ بے گُنہ اِنساں
کہِیں پر بوریوں میں سَر بُریدہ اور لا وارث سے لاشے
کہِیں پر حُکم رانوں اُور سیاست باز اَہلِ شَر کی
مَبنی بَر مفادِ باہَمی اِک مصلحت اندیشی ء بے جا
کہِیں مُلّائیت کا دَخل ِ بے ہَنگم
کہِیں حِزب ِ مخالِف کی ہے شور انگیزی ء بے بے جا
کہِیں پر محکمہ داران و وَردی پوش قاتِل۔۔۔۔۔!
کہِیں پر مِیڈیائ ظُلم و دَہشت خیزی ء بے جا
کہِیں پر بے ضمیری کی صحافت کاری ء بے جا
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
مُجھے معلُوم ہے یہ ہاتھ کِس کے ہیں
مُجھے معلُوم ہے یہ سب کِدھر سے آتے ہیں ‘ کِس اور جاتے ہیں
مُجھے معلُوم ہے اِن قاتِلوں کے کِتنے چہرے ہیں
مگر پِھر سوچتا ہُوں مَیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہُوں کِس سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
سبھی نا اَہل اور بے حِس
سبھی اِنسانیت دُشمن’ سبھی غدّار
اَے پیارے وطن ! تُجھ کو
خُدا آباد رکّھے
اُور سدا آزاد رکّھے۔۔۔۔۔!
بَہ جُز حرف ِ دُعا
اب پاس باقی کیا رہا ہے۔۔۔۔۔؟
مِرا ہر شہر کوئ قتل گاہِ دہر بنتا جا رہا ہے۔۔۔۔!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
( ایبٹ آباد ‘ پاک ستان )

چلو اُس پار چلتے ہیں


( وطن ِ پاک کے دِگر گُوں حالات ِ پیش آمدہ کے تناظُر میں )

چلو اُس پار چلتے ہیں

جہاں سب ایک دُوجے سے محبّت کرنے والے ہوں
جہاں فَتووں کی دُکّانوں پَہ تالے ہوں
جہاں مُلّائِیّت کا اُور جہالت اُور کسی بھی خوف و دہشت کا
نہ قبضہ ہو
جہاں پر حُکم رانوں ‘ نِیم مُلّاؤں ‘ وڈیروں اُور سیاست باز اہل ِ شر
کوئ بھی نہ ڈیرا ہو
جہاں پر مسجدوں میں ‘ مدرسوں میں ‘ خانقاہوں
اَور چوراہوں میں کوئ بَم نہ پَھٹتا ہو
جہاں حق بات کرنے پر کسی بھی اہل ِ حق کا سَر نہ کٹتا ہو
جہاں مُردوں کی لاشوں کی نہ یُوں تضحِیک ہوتی ہو
جہاں حَسّاس دِل اِنسان کی دُنیا نہ یُوں تاریک ہوتی ہو
جہاں پر پُھول سے معصُوم سب بَچّوں کے ہاتھوں میں قلم ہوں
اُور کتابیں ہوں
جہاں پر کوئ ماں ننگے سَر اَپنی جھولی پھیلائے
نہ یُوں رستے پَہ بیٹھی ہو
جہاں پر کوئ بیٹی بھی فقَط دو وقت کے کھانے کی خاطِر
یُوں سَر ِ بازار کوٹھے پر نہ بِکتی ہو
جہاں پر دو محبّت کرنے والے اہل ِ دِل کی راہ میں
رَسم و قیُود ِ جاہِلانہ کی یہ دیواریں نہ اُٹھتی ہوں
جہاں اَمن و اماں کی اِن سلیٹی فاختاؤں پر
کمانیں اَور بندُوقیں نہ چلتی ہوں
جہاں پر عدل اور اِنصاف ہی کا بول بالا ہو
جہاں پر دانِش و حِکمت کا اُور بَس عِلم و فن کا دَور دَورہ ہو
جہاں پر اہل ِ عِلم و فن کی سب تعظیم کرتے ہوں
جہاں پر محترم ہَستی کی سب تکریم کرتے ہوں
جہاں ہَر فَرد کے لب پر مُحبّت کا ترانہ ہو
جہاں پر زندگی کا ایک رَقص ِ والہانہ ہو

سو ‘ اپنے آپ سے آگے نِکلتے ہیں
چلو آؤ کِہ ہم اُس پار چلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پرویز ساحِر
( ایبٹ آباد ‘ پاک ستان )