کہُوں کِس سے۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ؟


( وطن ِ پاک میں رُو پذیر ہونے والے کَھٹناور سانحات ‘ خُونِیں واقعات اور
دِگر گُوں حالات کے تناظُر میں کہی گئ طبع زاد نظم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پرویز ساحِر)۔۔

کہُوں کِس سے۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ؟

مِرا ہر شہر کوئ قتل گاہِ دہر بنتا جا رہا ہے۔۔۔۔!
جہاں پر آئے دِن مذہَب ‘ سیاست اُور لسانی تفرقوں کے نام پر
معصُوم اِنسانوں کا قتل ِ عام ہوتا آ رہا ہے۔۔۔۔۔!
کہِیں پر بَم دَھماکوں ‘ گولیوں سے زخم خُوردہ بے گُنہ اِنساں
کہِیں پر بوریوں میں سَر بُریدہ اور لا وارث سے لاشے
کہِیں پر حُکم رانوں اُور سیاست باز اَہلِ شَر کی
مَبنی بَر مفادِ باہَمی اِک مصلحت اندیشی ء بے جا
کہِیں مُلّائیت کا دَخل ِ بے ہَنگم
کہِیں حِزب ِ مخالِف کی ہے شور انگیزی ء بے بے جا
کہِیں پر محکمہ داران و وَردی پوش قاتِل۔۔۔۔۔!
کہِیں پر مِیڈیائ ظُلم و دَہشت خیزی ء بے جا
کہِیں پر بے ضمیری کی صحافت کاری ء بے جا
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
مُجھے معلُوم ہے یہ ہاتھ کِس کے ہیں
مُجھے معلُوم ہے یہ سب کِدھر سے آتے ہیں ‘ کِس اور جاتے ہیں
مُجھے معلُوم ہے اِن قاتِلوں کے کِتنے چہرے ہیں
مگر پِھر سوچتا ہُوں مَیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہُوں کِس سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
سبھی نا اَہل اور بے حِس
سبھی اِنسانیت دُشمن’ سبھی غدّار
اَے پیارے وطن ! تُجھ کو
خُدا آباد رکّھے
اُور سدا آزاد رکّھے۔۔۔۔۔!
بَہ جُز حرف ِ دُعا
اب پاس باقی کیا رہا ہے۔۔۔۔۔؟
مِرا ہر شہر کوئ قتل گاہِ دہر بنتا جا رہا ہے۔۔۔۔!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
( ایبٹ آباد ‘ پاک ستان )