الله الحق ہے عزت اور ذلت الله کے ہاتھ میں ہے


الله الحق ہے عزت اور ذلت الله کے ہاتھ میں ہے ..

افتخار چودھری پوری قوم کا ہیرو تھا پھر اس نے عمران خان کے خلاف محاذ کھولا آج اس کا نام سنتے ہی لوگ اسے گالیاں دینا شروع کردیتے ہیں .

دو تہائی اکثریت دو سو سیٹیں اور ڈیڑھ کروڑ ووٹ لینے والے” بادشاہ سلامت” نیویارک میں چند ہزار لوگوں کو دیکھ کے بھاگ نکلے …

شوباز کی گردن میں دو ٹن سریا تھا اس کی بیٹی نے بیکری والے کو مارا آج شوباز بھی وی آی پی کلچر کے خلاف بول پڑا ..

بلاول بھٹو اور زرداری ڈاکو اپنے کارکنوں سے معافیاں مانگتے پھر رہے ہیں..

امریکن پٹھو مشرف جس نے عمران خان کو طالبان خان کا لقب دیا آج وہ بھی عمران خان کی تعریفیں کر رہا ہے ..

مولانا فضل الرحمٰن جس نے سسٹم کے خلاف اسٹینڈ لینے والے عمران خان کو نجانے کس کس طریقے سے بدنام کرنے کی کوشش میں اپنا پورا زور لگا دیا – آج اسکا نام لیتے ہی لوگ ‘ڈیزل – ڈیزل ‘ پکارنا شروع کر دیتے ہیں –

طلعت حسین ، جاوید چودھری ، مجیب ار رحمان شامی نامور صحافی تھے پر اب لوگ انہیں لفافہ صحافی کہتے ہیں ..

زیادہ پرانی بات نہیں دجال جیو کا مالک وقت کا فرعون میر شکیل جس کا پورے ملک میں طوطی بولتا تھا آج بیچارہ کسی کو شکل دکھانے کے قابل نہیں رہا .. اور مسٹر ‘ج’ بار بار اپنے چینل پر کیبل آپریٹرز سے منّت سماجت کرتا نظر آتا ہے کہ مہربانی کیجیے اور “Geo” دکھا دیجئے

رانا ثنا اللہ صبح شام عمران خان کے خلاف بکواس کرتا تھا اس کی وزارتیں گیئں ، رانا مشہود نے اس کی جگہ لی وہی کام کئے آج اس کی وزارتیں بھی گیئں ..

ابھی دو دن پہلے کی ہی بات ہے- مولانا طاہر اشرفی شرابی آیا عمران خان پر کیچڑ اچھالنے خود اپنی عزت خاک میں مل گئی

اور آج …
جاوید ہاشمی جو غالباً پاکستان کے سب سے عزت دار سیاست دان تھے پر جب انہوں نے عمران خان کے خلاف محاذ کھولا اور اسکی سٹرگل پر مختلف الزامات لگاے , ٹکے کی عزت نہیں رہی ملتانیوں نے گاڑی پے لوٹا پھینک دیا .. “داغی” کے نام سے پکارا جانے لگا اور بلآخر آج وہ ملتان سے اپنی آبائی نشست تک نہ جیت سکے !!
  بے شک عزت اور ذلت خدا بزرگ و برتر کے ہاتھ میں ہے ــ

ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﮨﻮﮐﮧ ﺟﺎﻭﯾﺪﮨﺎﺷﻤﯽ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎ۔۔ !!


ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﮨﻮﮐﮧ ﺟﺎﻭﯾﺪﮨﺎﺷﻤﯽ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎ۔۔ !!
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺫﻭﺍﻟﻔﻘﺎﺭﺑﮭﭩﻮ ﻧﮯ 1973 ﻣﯿﮟ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﮐﺎ ﮨﺎﺋﯽ
ﮐﻤﺸﻨﺮﺑﻨﻨﮯ ﮐﯽ ﭘﯿﺶ ﮐﺶ ﮐﯽ، ﺑﺪﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﯾﮧ ﻣﺎﻧﮕﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ
ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﭼﻼﻧﺎ ﭼﮭﻮﮌﺩﮮ ﻣﮕﺮ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﻧﮯ ﭘﯿﺶ
ﮐﺶ ﭨﮭﮑﺮﺍﺩﯼ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﯾﻮﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﺮﻝ ﺿﯿﺎﺍﻟﺤﻖ ﮐﻮ ﻟﻠﮑﺎﺭﺍ ﺍﻭﺭ
ﮐﮩﺎﮐﮧ ﺍﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﻗﻮﻣﯽ ﺍﺳﻤﺒﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺮﯾﺮ ﮐﺮﻧﮯ
ﮐﺎ ۔۔۔ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺁﺝ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎﮨﮯ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﻮﭘﺮﻭﯾﺰ ﻣﺸﺮﻑ ﮐﯽ ﺁﻣﺮﯾﺖ ﮐﮯ ﺁﮔﮯ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﮈﭦ
ﮔﯿﺎ ﺟﺐ ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮍﯼ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ،
ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﮯ ﺟﺮﻡ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﮐﻮ 22ﺳﺎﻝ ﻗﯿﺪ ﮐﯽ ﺳﺰﺍﺳﻨﺎﺩﯼ ﮔﺌﯽ،
ﮨﺎﺷﻤﯽ ﻧﮯ ﻣﻌﺎﻓﯽ ﻧﮧ ﻣﺎﻧﮕﯽ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺟﯿﻞ ﺳﮯ ﺿﻤﺎﻧﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺧﻮﺩ ﺍﺱ ﮐﯽ
ﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺑﺎﺯﯾﺎﮞ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ، ﺩﮬﺮﺗﯽ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻓﺮﺯﻧﺪ ﺍﭘﻨﻮﮞ
ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﮍﮔﯿﺎﻣﮕﺮ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﺳﻮﺩﮮ ﺑﺎﺯﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﻮ 2008 ﮐﯽ ﮐﺎﺑﯿﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺷﺎﻣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍﮐﮧ
ﺍﺱ ﮐﻮ ﭘﺮﻭﯾﺰ ﻣﺸﺮﻑ ﺟﯿﺴﮯ ﺁﻣﺮ ﺳﮯ ﺣﻠﻒ ﻟﯿﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ، ﺍﺱ ﮐﯽ
ﭘﺎﺭﭨﯽ ﻧﮯ ﺣﻠﻒ ﻟﯿﺎ، ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﭘﺮﮈﭨﺎﺭﮨﺎ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻋﺮﻭﺝ ﮐﮯ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮓ ﻥ ﮐﻮ
ﭼﮭﻮﮌﺩﯾﺎﺍﻭﺭ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻮﻟﯿﺖ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﮐﺮﻟﯽ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺐ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﻧﮯ ﺍﺳﺘﻌﻔﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﮯ
ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﺳﺘﻌﻔﯽٰ ﻧﮧ ﺩﯾﺌﮯ ﺗﻮﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻋﻼﻥ ﭘﺮ ﮈﭦ ﮔﯿﺎﺍﻭﺭ ﺍﺳﻤﺒﻠﯽ
ﮐﮯ ﻓﻠﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﺳﺘﻌﻔﯽٰ ﺩﮮ ﮐﺮ ﭘﮭﺮ ﻋﻮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﭼﻼﺁﯾﺎ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﻋﺮﻭﺝ ﮐﮯ
ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌﺍ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺁﺝ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﺳﮯ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎ ﮨﮯ ، ﺟﻮ ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ
ﮐﻮ ﺩﮬﺎﻧﺪﻟﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺟﺎﻭﯾﺪ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ
ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭﮐﯽ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﮐﯽ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺁﺝ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﺳﮯ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎﮨﮯ ، ﺟﻮ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﯽ
ﺍﺻﻼﺣﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ
ﮨﺎﺷﻤﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﭙﻠﺰﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﻟﻮﭨﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺮﭘﭧ
ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭﮐﯽ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﮐﯽ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﭘﮯ ﮐﯽ ﮐﺮﭘﺸﻦ ﮐﺎ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ،
ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﺷﺨﺺ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎ، ﺟﺲ ﮐﺎﻧﺎﻡ ﻣﻠﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ
ﮐﺮﭘﺸﻦ ﮐﯽ ﻋﻼﻣﺖ ﮨﮯ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﺎﺁﻏﺎﺯ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﮐﯿﺎ، ﺟﺐ
ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ، ﺁﺻﻒ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﯽ ﺍﻟﻒ ﺑﮯ
ﺳﮯ ﻭﺍﻗﻒ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ، ﻗﻮﻡ ﮐﺎﺑﺰﺭﮒ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺩﺍﻥ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﺑﻨﺎﺩﯾﺎﮔﯿﺎ
ﻭﮦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﮨﺎﺭﮐﺮﺑﮭﯽ ﺷﺎﯾﺪ ﺍﻣﺮﺭﮨﮯ ﮔﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮨﺎﺭ ﮐﺮﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ
ﮐﺮﺩﯾﺎﮐﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﯾﮧ ﻭﮨﯽ ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﮨﮯ ، ﺟﺲ ﭘﺮ ﺗﻢ ﺩﮬﺎﻧﺪﻟﯽ
ﮐﺎ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﻮ، ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﻧﻈﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺭﮔﯿﺎﮨﻮﮞ، ﺩﯾﮑﮭﻮ
ﺍﮔﺮﺗﻢ ﺁﺝ ﺟﯿﺖ ﮔﺌﮯ ﮨﻮﺗﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﻞ ﮐﯽ ﮨﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺮﻭ

Author(Anonymous)